٭ وزیر اعظم نے ’ایک ضلع ایک پروڈکٹ‘ اسکیم کو بڑھاوا دینے اور اُمنگوں والے ضلعوں کو مزید فروغ دینے پر زور دیا            ٭ وزیر داخلہ اور بی جے پی صدر آج سے آسام کا دورہ کررہے ہیں، جہاں وہ مختلف پروگراموں میں شرکت کریں گے            ٭ لوک سبھا کے اسپیکر نے ضابطوں پر مبنی بین الاقوامی نظام کے تئیں بھارت کی حمایت کو دوہرایا            ٭ نیوزی لینڈ نے کہا ہے کہ وہ بھارت کو اپنے سب سے اہم ساجھیدار ملکوں میں سے ایک مانتا ہے            ٭ بین الاقوامی شمسی اتحاد کی پانچویں اسمبلی اس مہینے کی سترہ تاریخ سے نئی دلّی میں ہوگی           
خبروں کی جھلکیاں

Aug 14, 2022
9:38PM

ہماچل پردیش اسمبلی نے اجتماعی طور پر تبدیلی مذہب پر روک لگانے کے لئے مذہب کی آزادی کا ترمیمی بل دو ہزار بائیس منظور کیا

@CMOFFICEHP
ہماچل پردیش اسمبلی نے اجتماعی طور پر تبدیلی مذہب پر روک لگانے کے لئے مذہب کی آزادی کا ترمیمی بل 2022 منظور کرلیا ہے۔ یہ بل زبانی ووٹ سے پاس کیا گیا، جبکہ اپوزیشن ارکان نے سرکار سے مطالبہ کیا کہ اِسے ایک چیدہ کمیٹی کے سپرد کیا جائے۔ 
مذکورہ بل میں اجتماعی طور پر مذہب بدلنے کا حوالہ دیا گیا ہے، جس کا مطلب ایک ہی وقت میں دو یا اس سے زیادہ افراد کا مذہب بدلنا ہے۔ اس میں جبراً مذہب بدلنے کے لئے سزا کی مدت سات سال سے بڑھا کر دس سال تک کرنے کی بات کہی گئی ہے۔ 
ریاست کے وزیراعلیٰ جے رام ٹھاکر نے اسمبلی میں جمعہ کو یہ بل پیش کیا تھا۔ انھوں نے کہا کہ اجتماعی طور پر مذہب تبدیل کرنے کے سلسلے کو روکنے کی خاطر یہ بل لایا گیا ہے۔ انھوں نے ہماچل پردیش میں Banjar اور Rohru رامپور میں اجتماعی طور پر مذہب بدلنے کے واقعات کی مثال پیش کی۔x

   متعلقہ خبریں

  لائیو ٹوئٹر فیڈ